Continuation of most national measures but easing of measures for children and young people

Corona information is frequently changed and may therefore be out of date.

You will find updated news from the Government on Topic Page The coronavirus situation. General information about the coronavirus can be found on Helsenorge.no.

The Norwegian Government is generally continuing the strict infection control measures to prevent a new wave of infections but is easing some measures for children and young people. The national level of measures for schools is downgraded to yellow, and local sports and leisure activities for children and young people are no longer discouraged. The recommendation to avoid home visits remains in effect but everyone should limit social contact.

Read this press release in Polish, Arabic, Urdu and Somali below.

“Even though the measures appear to be working, and the infection rate has declined somewhat, the situation remain uncertain.  We are seeing how infection is impacting the countries around us and is causing sickness and fatalities. We are seeking to prevent this from occurring in Norway. Therefore, we are maintaining strict national measures and one of the strictest border controls in Europe”, says Prime Minister Erna Solberg.

The situation remains uncertain. Currently, it is not possible for the Norwegian Institute of Public Health and the Norwegian Directorate of Health to assess the effectiveness of the measures introduced on 4 January.  Nevertheless, the Norwegian Government is opting to ease parts of the strictest national measures, since there are signs that the curve of infection is flattening.

The recommendation to avoid home visits will not be continued. This means that we may once again have up to five guests, in addition to those who are already living together, but everyone should continue to limit social contact.

Most private gatherings and various events should still be postponed or cancelled. However, if gatherings are to be held, the following rules apply: For private gatherings, such as a birthday celebration in rented premises, the limit is a maximum of ten attendees. If the private gathering is taking place outdoors, the limit is now 20 attendees. For events, there are no changes to the rules regarding number of attendees.

The national level of measures for lower and upper secondary schools is downgraded from red to yellow. The municipalities may maintain a red level through this week if they need to prepare for the transition to a yellow level. Municipalities with high rates of infection should consider maintaining the red level in lower and upper secondary schools, and, if needed, consider returning to a red level in day-care facilities and primary schools.

Local training sessions and leisure activities for children and young people will no longer be discouraged. Children and young people under 20 years of age may train and participate in leisure activities as usual, both indoors and outdoors. They may also be exempt from the recommendation of a one-metre physical distance where this is necessary to conduct the activity. For children and young people, training activities internally in clubs, teams and associations may therefore be held, but matches, tournaments, events etc. must still be postponed.

“We have consistently stated that we shall prioritise children and young people when the infection situation allows for this. Therefore, we have decided that the national level of measures for lower and upper secondary schools shall be downgraded to a yellow level, and that local training and leisure activities for children and young people should no longer be discouraged. We know how important these arenas are for them. We are also once again allowing for home visits but ask that people limit the number of people with whom they meet”, says Solberg.

There are important differences in the infection situation throughout the country. It is important that local authorities consider stricter measures in areas with high rates of infection.

“A third wave of infections will make it very difficult to implement the immunisation of the population. Many employees in the health and care services are now exhausted following an immense workload over an extended period. Therefore, we need national measures to avoid a new wave of infections putting pressure on the healthcare services and rendering immunisation more challenging”, says Minister of Health and Care services Bent Høie.

The ban on the serving of alcohol in licensed establishments and at events will remain in effect until further notice. The Norwegian Institute of Public Health recommended lifting the ban, while the Norwegian Directorate of Health was of the opinion that the infection situation remains uncertain and recommended that it remain in effect.

“The Norwegian Government agrees with the Norwegian Directorate of Health and is maintaining the national ban on the serving of alcohol until further notice. This will be reviewed next week.  We know that employees in the hospitality industry are overrepresented in terms of coronavirus infection. A Danish expert group recently presented a report showing that bars are among the areas that have the highest impact of the spread of infection”, says Høie.

The measures will remain in effect as long as they are needed, but the Norwegian Government will continuously assess the situation. The ban on the serving of alcohol will be reviewed already next week.

Day-care facilities and schools

  • The national level of measures for lower and upper secondary schools is downgraded from red to yellow. The municipalities may maintain a red level through this week if they need to prepare for the transition to a yellow level. Municipalities with high rates of infection should consider maintaining the red level in lower and upper secondary schools, and, if needed, consider returning to a red level in day-care facilities and primary schools. (New).

Recommendations for everyone across the country

Social contact

  • Everyone should limit social contact to the greatest extent possible. It is recommended that meetings with other people take place outdoors, and to avoid visits of more than five guests in addition to those who are already living together. If all of the guests are from the same household, more visitors are permitted, however, the number of visitors must allow for physical distancing. Children in day-care facilities and primary schools may receive visits from members of their own cohort. (New)

Travel

  • Do not travel domestically or internationally unless this is essential. Travel to places of study may still be considered essential travel, while travel to participate in events is, in principle, not considered essential travel. Stays in cabins in Norway with members of your household continues to be permitted, in accordance with the prevailing local and national advice and rules. (New)

Higher education

  • All universities, university colleges and vocational schools should use digital instruction where this is possible. All planned events should be digital and larger lectures and gatherings should be avoided. Students in areas without high rates of infection should have the option of in-person instruction at least once a week where it is possible to implement smaller groups and in accordance with infection control guidelines. (New)

Sports, leisure, cultural and life stance events

  • Children and young people under 20 years of age may train and participate in leisure activities as usual, both indoors and outdoors. They may also be exempt from the recommendation of a one-metre physical distance where this is necessary to conduct the activity. For children and young people, training activities internally in clubs, teams and associations may therefore be held, but matches, tournaments, events etc. must still be postponed. (New)
  • For adults, the recommendation to not conduct organised activities indoors remains in effect. Adults may participate in exercise outdoors, if it is possible to maintain sufficient physical distancing.
  • The elite tiers of sports are recommended to postpone all league matches for two weeks. The Norwegian Olympic and Paralympic Committee and Confederation of Sports is requested to coordinate these efforts with the national federations. (New)
  • Cultural events such as performances, shows etc., as well as courses/conferences and religious and life stance ceremonies shall be postponed if they gather attendees from multiple municipalities. People are requested to respect limitations announced by the event organiser when events are implemented which are reserved for the residents of a single municipality. This includes both outdoor and indoor events, but not funerals. (New)

Workplaces

  • Working from home is recommended for everyone who has the option of doing so.

Nationwide rules

Private gatherings and events

Most private gatherings and events should be postponed or cancelled. However, if they are to be held, the following rules apply:

  • A maximum of ten individuals may attend private gatherings outside their own home, such as a birthday celebration in rented premises. If the private gathering is taking place outdoors, the limit is 20 attendees. (New)
  • There is a limit of ten individuals for indoor sporting events, cultural events, seminars, life stance community gatherings, ceremonies, etc., in addition to a limit of 200 individuals where everyone in the audience is seated in fixed seating. Up to 50 individuals are permitted to attend funerals, even if the seating is not fixed.
  • A maximum of 200 people may attend outdoor events, while the limit is 600 people for events at which all members of the audience are seated in fixed seating.
  • The Norwegian Directorate of Health will be tasked with assessing whether the requirement of fixed seats for accommodating up to 200 or 600 participants at events should be replaced by other requirements, e.g., a requirement of designated seating. (New)

Outdoor venues and hospitality

The ban on the serving of alcohol in licensed establishments will remain in effect until further notice. This will be reviewed in week 4, i.e., next week.

استمرار معظم الإجراءات الوطنية، لكنها تمنح تسهيلات للأطفال والشباب

 

وتواصل الحكومة بشكل رئيسي اتخاذ إجراءات صارمة للوقاية من العدوى لوقف موجة جديدة من العدوى، ولكنها تمنح بعض التسهيلات للأطفال والشباب. يجري خفض مستوى الإجراءات الوطنية للمدارس إلى المستوى الأصفر، ووقف التوصية بعدم القيام بالتمارين المحلية والأنشطة الترفيهية للأطفال والشباب. التوصية بتجنب الزيارات المنزلية ليست مستمرة، لكن ينبغي للجميع الحد من الاحتكاك الاجتماعي.

 

 -على الرغم من أن الإجراءات تبدو فاعلة، وأن معدلات العدوى قد انخفضت إلى حد ما، فإن الوضع لا يزال غير آمن.  نرى كيف تضرب العدوى في البلاد التي حولنا وتسبّب المرض والموت. وسنحاول تجنب حدوث ذلك في النرويج. ولذلك سنستمر في الإجراءات الوطنية المتشددة وواحدة من أشد الإجراءات المتشددة في مراقبة الحدود في أوروبا، كما صرحت رئيسة الوزراء إيرنا سولبيرغ Erna Solberg.

 

ولا يزال وضع العدوى غير آمن. المجال غير مُتاح حالياً لمعهد الصحة العامة ومديرية الصحة لكي تقيّم مدى فاعلية الإجراءات التي اتّخذت في 4 يناير.  ومع ذلك، تختار الحكومة تخفيف بعض الإجراءات الوطنية الأكثر صرامة، لأن هناك دلائل على أن العدوى تتراجع.

 

التوصية بتجنب الزيارات المنزلية لم تعد سارية. وهذا يعني أننا ثانية تلقّي 5 ضيوف إضافة لمن يسكنون فعلاً مع بعضهم، لكن ينبغي للجميع الاستمرار في الحد من الاحتكاك الاجتماعي.

 

لا يزال ينبغي تأجيل أو إلغاء معظم التجمعات الخاصة والفعاليات المختلفة. إن كان ولا بد من عقد التجمعات، فتنطبق القواعد التالية: بالنسبة للتجمعات الخاصة خارج منزل المرء، كعيد الميلاد في قاعة مستأجرة مثلاً، فإن الحد الأقصى هو 10 أشخاص. إذا كانت التجمعات الخاصة خارجية في الهواء الطلق، فإن حدّها الآن هو 20 شخصاً. بالنسبة لتنظيم الفعاليات فليس هناك تغيير بالنسبة لعدد الأشخاص.

 

سيجري تخفيض مستوى الإجراءات الوطنية بالنسبة للمدارس الثانوية والمعاهد المهنية من المستوى الأحمر إلى المستوى الأصفر. بإمكان البلديات المحافظة على المستوى الأحمر في هذا الأسبوع، إذا كانوا بحاجة لذلك للاستعداد للانتقال إلى المستوى الأصفر. ينبغي للبلديات التي تعاني من ارتفاع ضغط العدوى أن تفكر في الاحتفاظ بالمستوى الأحمر في المدارس الثانوية والمعاهد المهنية، وعند الحاجة أن تفكر في المستوى الأحمر في دور الحضانة ومدارس الأطفال أيضاً.

 

توقفت التوصية بعدم المشاركة في التمارين المحلية والأنشطة الترفيهية للأطفال والشباب. باستطاعة الأطفال والشباب دون 20 سنة أن يتمرّنوا ويشاركوا في الأنشطة الترفيهية كالمعتاد، سواء داخلياً في الأماكن المغلقة، أو خارجياً في الهواء الطلق. كما يمكن استثناؤهم من التوصية المتعلقة بمسافة متر 1 عندما يكون ضرورياً القيام بالنشاط. ولذلك، يستطيع للأطفال والشباب القيام بأنشطة التمارين العادية داخل النوادي والفرق والجمعيات، لكن يجب استمرار تأجيل المباريات ومباريات الكؤوس والدوريات وغيرها.

 

-قلنا طوال الوقت إننا سنعطى الأولوية للأطفال والشباب عندما تسمح أوضاع العدوى بذلك. ولذلك فقد قررنا خفض مستوى الإجراءات الوطنية للمدارس الثانوية والمعاهد المهنية إلى المستوى الأصفر، والتوقف عن التوصية بعدم القيام بالتمارين المحلية والأنشطة الترفيهية بالنسبة والشباب. نعرف كم هي مهمة هذه الساحات بالنسبة لهم. وسنسمح أيضاً للزيارات المنزلية مرة أخرى، لكننا سنطلب من الناس تحديد عدد الأشخاص الذين يلتقون بهم، كما صرحت سولبيرغ Solberg.

 

هناك اختلافات كبيرة بالنسبة للعدوى في أنحاء البلاد. ومن المهم أن تنظر السلطات المحلية في اتخاذ إجراءات أكثر صرامة في المناطق التي تنتشر فيها العدوى كثيراً.

 

  - موجة عدوى ثالثة ستجعل من الصعب جداً إتمام تلقيح السكان. العديد من الموظفين في دائرة الخدمات الصحية والرعاية مرهقون الآن بعد ضغوط العمل الهائلة على مدى فترة طويلة. ولذلك فنحن بحاجة إلى إجراءات وطنية لتجنب موجة جديدة من العدوى من شأنها الضغط على دائرة الخدمات الصحية وتجعل التلقيح شاقاً بقدر أكبر، كما صرحت هوي Høie.

 

منع تقديم الكحول في المطاعم والمقاهي والفعاليات مستمر حتى إشعار آخر. أوصى معهد الصحة العامة برفع الحظر، بينما رأت مديرية الصحة أن وضع العدوى لا يزال غير واضح، ولذلك أوصت بالإبقاء عليه.

 

 - تتفق الحكومة مع مديرية الصحة وستواصل منع تقديم الكحول في أنحاء البلاد حتى إشعار آخر. سيجرى تقييم جديد في الأسبوع القادم.  نعلم أن الموظفين قي قطاع خدمات المطاعم والمقاهي ممثل تمثيلاً زائداً فيما يتعلق بعدوى كورونا. أعدت مجموعة دنماركية من الخبراء تقريراً يظهر أن البارات هي من ضمن الأماكن التي لها أثر مرتفع بانتشار العدوى، وفقاً لتصريح هوي Høie.

 

ستطول الإجراءات طالما اقتضت الحاجة لها، لكن الحكومة ستجري باستمرار تقييماً للوضع. سيتم النظر في منع تقديم الكحول في وقت مبكر الأسبوع القادم.

 

دور الحضانة والمدارس

 

·         سيجري تخفيض مستوى الإجراءات الوطنية بالنسبة للمدارس الثانوية والمعاهد المهنية من المستوى الأحمر إلى المستوى الأصفر. بإمكان البلديات المحافظة على المستوى الأحمر في هذا الأسبوع، إذا كانوا بحاجة لذلك للاستعداد للانتقال إلى المستوى الأصفر. ينبغي للبلديات التي تعاني من ارتفاع ضغط العدوى أن تفكر في الاحتفاظ بالمستوى الأحمر في المدارس الثانوية والمعاهد المهنية، وعند الحاجة أن تفكر في المستوى الأحمر في دور الحضانة ومدارس الأطفال أيضاً. (جديد).

 

توصيات للجميع في جميع أنحاء البلد

 

الاحتكاك الاجتماعي

 

·         ينبغي للجميع الحد من الاحتكاك الاجتماعي بأكبر درجة ممكنة. يُنصح بلقاء الآخرين في الخارج، في الهواء الطلق، وليس تلقّي الزيارات من قبل عدد يزيد عن 5 أشخاص إضافة لمن يسكنون فعلاً مع بعضهم البعض. إذا أتى جميع الضيوف من المنزل ذاته، يُسمح بتواجد العديد من الأشخاص، إلا أنه لا يُسمح بعدد لا يُتيح المحافظة على التباعد الاجتماعي. باستطاعة الأطفال في دور الحضانة ومدارس الأطفال تلقّي الزيارة من مجموعتهم الخاصة. (جديد)

 

السفريات

 

·         لا تسافر داخل البلاد أو خارجها، إلا إذا كان ذلك ضرورياً. السفر إلى أماكن الدراسة لا تزال تعتبر بأنها سفر ضروري، بينما السفر للمشاركة في الفعاليات لا تعتبر من حيث المبدأ سفراً ضرورياً. لا زالت التوصية بعدم الإقامة في الأكواخ غير سارية، وذلك بالنسبة للأشخاص الذين يسكن المرء معهم، فيما يتعلق بالتوصيات المحلية والوطنية والقواعد السارية. (جديد)

 

التعليم العالي

 

·         يجب على كل الجامعات والمدارس الثانوية والمعاهد المهنية استعمال التعليم الرقمي حيث أمكن ذلك. جميع الفعاليات المنظمة ينبغي عقدها عبر الوسائط الرقمية، والمحاضرات الكبرى والتجمعات ينبغي تجنبها. ينبغي إتاحة المجال للطلاب في المناطق التي ليس فيها عدوى مرتفعة، للحصول على تعليم شخصي مرة واحدة في الأسبوع على الأقل حين يكون ذلك ممكناً إنجازه في مجموعات صغيرة ووفقاً لإرشادات الوقاية من العدوى. (جديد)

 

الفعاليات الرياضية والترفيهية والثقافية والروحية

·         باستطاعة الأطفال والشباب دون 20 سنة أن يتمرّنوا ويشاركوا في الأنشطة الترفيهية كالمعتاد، سواء داخلياً في الأماكن المغلقة، أو خارجياً في الهواء الطلق. كما يمكن استثناؤهم من التوصية المتعلقة بمسافة متر 1 عندما يكون ضرورياً القيام بالنشاط. ولذلك، يستطيع للأطفال والشباب القيام بأنشطة التمارين العادية داخل النوادي والفرق والجمعيات، لكن يجب استمرار تأجيل المباريات ومباريات الكؤوس والدوريات وغيرها. (جديد)

·         بالنسبة للكبار تستمر التوصية بعدم تنظيم نشاط منظم داخلياً في الأماكن المغلقة. خارجياً في الهواء الطلق باستطاعة الكبار التمرين إذا كان ممكناً الحفاظ على مسافة جيدة بين الأشخاص.

·         يوصَى بتأجيل جميع الألعاب الدورية لمدة أسبوعين. يُرجى من الاتحاد الرياضي النرويجي أن يُنسّق ذلك مع الاتحادات الخاصة. (جديد)

·         الفعاليات الثقافية كالعروض المسرحية والمعارض وغيرها، وكذلك الدورات/المؤتمرات والاحتفالات الدينية والروحية ينبغي تأجيلها إذا جمعت أشخاصاً من عدة بلديات. يُرجى من الناس احترام القيود التي يوضحها المنظّم عند عقد الفعالية، والمرتبطة خاصة بالسكان في البلدية المحددة. وهذا يشمل كلاً من الفعاليات الداخلية في الأماكن المغلقة، والخارجية في الهواء الطلق، لكن ليس جنازات الدفن. (جديد)

أماكن العمل

 

·         يُنصح باستعمال المكتب المنزلي لجميع الذين يُتاح لهم المجال لذلك.

 

 

قواعد سارية للبلد بكامله

 

التجمعات والنشاطات الخاصة

 

ينبغي تأجيل أو إلغاء معظم التجمعات والفعاليات الخاصة. إن كان لا بد من عقد التجمعات، فتنطبق القواعد التالية:

 

·         الحد الأقصى عشرة أشخاص للتجمعات الخاصة خارج منزل المرء، كعيد الميلاد في قاعة مستأجرة مثلاً. إذا كانت التجمعات الخاصة خارجية في الهواء الطلق، فإن حدّها هو 20 شخصاً. (جديد)

·         الحد الأقصى هو عشرة أشخاص في الأنشطة الداخلية في الأماكن المغلقة، كالفعاليات الرياضية والثقافية والندوات والتجمعات الروحية والشعائر الاحتفالية وغيرها، و200 شخاصاً حيث يكون الجمهور كله جالساً في مقاعد ثابتة. في جنازات الدفن يُسمح بأن يكون العدد إلى 50 شخصاً، حتى ولو كانت المقاعد غير ثابتة.

·         الحد الأقصى هو 200 شخصاً للتجمعات الخارجية في الهواء الطلق، ولا يزال العدد هو 600 شخصاً حيث يجلس كل الجمهور في مقاعد ثابتة.

·         وستكون مهمة مديرية الصحة تقييم إن كان شرط المقاعد الثابتة للسماح بـ 200 أو 600 مشارك في الفعالية، ينبغي استبداله بشروط أخرى، كشرط تخصيص مقاعد ثابتة للأشخاص. (جديد)

 

الشهرات الليلية والمطاعم والمقاهي

 

·         منع سكب الكحول في أماكن تقديم الطعام والشراب مستمر حتى إشعار آخر. سيجري تقييم جديد في الأسبوع 4، أي الأسبوع القادم.

Rząd kontynuuje większość rygorystycznych obostrzeń przeciwepidemicznych które mają na celu zatrzymanie nowej fali zakażeń, ale luzuje niektóre ograniczenia dotyczące dzieci i młodzieży. Ogólnokrajowy poziom obostrzeń dla szkół zostaje obniżony do poziomu żółtego, nie odradza się już lokalnych zajęć sportowych i rekreacyjnych dla dzieci. Zalecenie dotyczące unikania odwiedzin domowych nie zostaje przedłużone, ale wszyscy powinni ograniczać kontakty społeczne.

– Chociaż wygląda na to, że obostrzenia działają, a wskaźniki zakażeń nieco spadły, sytuacja nadal jest niepewna.  Widzimy, jak wirus uderza w sąsiednie kraje, powodując dużą liczbę zachorowań i zgonów. Staramy się tego uniknąć w Norwegii. Dlatego kontynuujemy surowe ogólnokrajowe obostrzenia oraz kontrolę na granicach, która należy do najbardziej rygorystycznych w Europie - mówi premier Norwegii Erna Solberg.

Sytuacja epidemiologiczna nadal jest niepewna. Norweski Instytut Zdrowia Publicznego i Dyrektoriat ds. Zdrowia nie są aktualnie w stanie ocenić efektu obostrzeń wprowadzonych w dniu 4 stycznia.  Niemniej rząd decyduje się na pewne złagodzenie najsurowszych ogólnokrajowych ograniczeń, ponieważ wiele wskazuje na to, że wskaźnik zakażeń się wyrównuje.

Zalecenie, aby unikać odwiedzin w domach, nie zostaje przedłużone. Oznacza to, że możemy przyjmować do 5 gości poza osobami, z którymi mieszkamy, ale wszyscy nadal powinni ograniczać kontakty społeczne.

Większość prywatnych spotkań i różnych wydarzeń powinna zostać przełożona lub odwołana. Jeśli spotkania mimo wszystko muszą się odbyć, obowiązują następujące zasady: W przypadku prywatnych spotkań poza własnym domem, takich jak urodziny w wynajętym lokalu, limit wynosi do 10 osób. Jeśli prywatne spotkanie odbywa się na świeżym powietrzu, limit wynosi teraz 20 osób. W przypadku wydarzeń liczba osób pozostaje bez zmian.

Ogólnokrajowy poziom obostrzeń dla szkół gimnazjalnych i licealnych zostaje obniżony z czerwonego na żółty. Gminy mogą utrzymać poziom czerwony do końca tego tygodnia, jeśli potrzebują czasu, aby przygotować się do przejścia na poziom żółty. Gminy z wysokim wskaźnikiem zakażeń powinny rozważyć zachowanie poziomu czerwonego w gimnazjach i liceach, a w razie potrzeby powinny rozważyć wprowadzenie poziomu czerwonego również w przedszkolach i szkołach podstawowych.

Nie odradza się już zajęć sportowych i rekreacyjnych dla dzieci i młodzieży. Dzieci i młodzież poniżej 20 roku życia mogą trenować i uczestniczyć w zajęciach rekreacyjnych na normalnych zasadach, zarówno w pomieszczeniach jak i na świeżym powietrzu. Mogą być również zwolnieni z zalecenia zachowania 1 metra odległości, jeśli jest to konieczne dla uczestniczenia w danych zajęciach. Dlatego w przypadku dzieci i młodzieży można organizować treningi wewnątrz klubów, zespołów i stowarzyszeń na zwykłych zasadach, ale mecze, puchary i zgromadzenia nadal muszą zostać przełożone.

– Od początku mówiliśmy, że będziemy priorytetowo traktować dzieci i młodzież, jeśli tylko pozwoli na to sytuacja epidemiologiczna. Dlatego postanowiliśmy, że ogólnokrajowy poziom obostrzeń dla szkół gimnazjalnych i licealnych zostanie obniżony do poziomu żółtego, a lokalne treningi i zajęcia rekreacyjne dla dzieci i młodzieży nie będą dłużej odradzane. Wiemy, jak duże znaczenie mają dla nich te obszary życia. Ponownie zezwalamy na odwiedziny w domach, ale prosimy o ograniczenie ilości osób, z którymi ludzie się spotykają, mówi premier Solberg.

Sytuacja epidemiologiczna jest bardzo różna w różnych częściach kraju. Ważne jest, aby na obszarach o wysokim wskaźniku zakażeń lokalne władze rozważyły wprowadzenie dalej idących obostrzeń.

– Trzecia fala zachorowań bardzo utrudni przeprowadzenie szczepień ludności. Wielu pracowników służby zdrowia i sektora opieki jest zmęczonych po dużym obciążeniu pracą przed długi czas. Dlatego potrzebujemy ogólnokrajowych obostrzeń, aby uniknąć kolejnej fali zakażeń, która obciążyłaby służbę zdrowia i utrudniła szczepienia, mówi minister zdrowia i opieki Bent Høie.

Zakaz serwowania alkoholu w lokalach gastronomicznych oraz na wydarzeniach zostaje przedłużony do odwołania. Norweski Instytut Zdrowia Publicznego zalecił zniesienie zakazu, podczas gdy Dyrektoriat ds. Zdrowia stwierdził, że sytuacja epidemiologiczna nadal jest niejasna i zalecił utrzymanie zakazu.

– Rząd zgadza się z Dyrektoriatem ds. Zdrowia i do odwołania przedłuża ogólnokrajowy zakaz serwowania alkoholu. Kwestia ta zostanie poddana ponownej ocenie w przyszłym tygodniu.  Wiemy, że pracownicy branży restauracyjnej są nadreprezentowani, jeśli chodzi o zakażenie koronawirusem. Duńska grupa ekspertów przedstawiła niedawno raport, z którego wynika, że bary należą do obszarów, które mają największy wpływ na rozprzestrzenianie się wirusa, mówi Høie.

Obostrzenia będą obowiązywały tak długo, jak długo będą potrzebne, ale rząd będzie na bieżąco oceniał informację. Zniesienie zakazu serwowania alkoholu ma zostać rozważone już w przyszłym tygodniu.

Przedszkola i szkoły

 

  • Ogólnokrajowy poziom obostrzeń dla szkół gimnazjalnych i licealnych zostaje obniżony z czerwonego na żółty. Gminy mogą utrzymać poziom czerwony do końca tego tygodnia, jeśli potrzebują czasu, aby przygotować się do przejścia na poziom żółty. Gminy z wysokim wskaźnikiem zakażeń powinny rozważyć zachowanie poziomu czerwonego w gimnazjach i liceach, a w razie potrzeby powinny rozważyć wprowadzenie poziomu czerwonego również w przedszkolach i szkołach podstawowych. (Nowy).

Zalecenia dla wszystkich w całym kraju

Kontakty społeczne

 

  • Każdy powinien w jak największym stopniu ograniczyć kontakty społeczne. Zaleca się spotkania na zewnątrz i przyjmowanie do 5 gości poza osobami, z którymi się mieszka. Jeśli wszyscy goście należą do jednego gospodarstwa domowego, gości może być więcej, lecz na tyle mało, aby można było zachować odległość. Dzieci uczęszczające do przedszkoli i szkół podstawowych mogą odwiedzać dzieci ze swojej grupy. (Nowy)

Podróże

  • Nie należy podróżować po kraju ani za granicę, jeśli nie jest to konieczne. Podróż na uczelnię nadal można uznać za konieczną, natomiast podróże w celu uczestnictwa w wydarzeniach z zasady nie są uznawane za konieczne. Nadal nie odradza się pobytów w domkach wakacyjnych w Norwegii razem z osobami, z którymi się mieszka, należy jednak przestrzegać lokalnych i ogólnokrajowych zaleceń i zasad. (Nowy)

Uczelnie wyższe

  • Wszystkie uniwersytety, szkoły wyższe i zawodowe powinny w miarę możliwości korzystać z nauczania zdalnego. Wszystkie planowane wydarzenia powinny odbywać się zdalnie, należy unikać wykładów i spotkań dla większej liczby osób. Studenci na obszarach bez wysokiego wskaźnika zakażeń powinni mieć możliwość nauczania stacjonarnego przynajmniej raz w tygodniu, jeśli możliwe jest zorganizowanie tego w mniejszych grupach i zgodnie z wytycznymi przeciwepidemicznymi. (Nowy)

Wydarzenia sportowe, rekreacyjne, kulturalne i światopoglądowe

  • Dzieci i młodzież poniżej 20 roku życia mogą trenować i uczestniczyć w zajęciach rekreacyjnych na normalnych zasadach, zarówno w pomieszczeniach jak i na świeżym powietrzu. Mogą być również zwolnieni z zalecenia zachowania 1 metra odległości, jeśli jest to konieczne dla uczestniczenia w danych zajęciach. Dlatego w przypadku dzieci i młodzieży można organizować treningi wewnątrz klubów, zespołów i stowarzyszeń na zwykłych zasadach, ale mecze, puchary i zgromadzenia nadal muszą zostać przełożone. (Nowy)
  • W przypadku dorosłych przedłuża się zalecenie, aby nie prowadzić zorganizowanych zajęć w pomieszczeniach. Na zewnątrz dorośli mogą trenować, jeśli możliwe jest zachowanie odpowiedniego dystansu.
  • W przypadku sportu zawodowego zaleca się przełożenie wszystkich rozgrywek o dwa tygodnie. Norweska Konfederacja Sportu proszona jest o skoordynowanie tego z poszczególnymi klubami sportowymi. (Nowy)
  • Wydarzenia kulturalne, takie jak spektakle, pokazy itp., a także kursy/konferencje oraz ceremonie religijne i światopoglądowe muszą zostać przełożone, jeśli gromadzą się na nich ludzie z kilku gmin. Ludzie proszeni są o przestrzeganie ograniczeń, o których organizator informuje, kiedy organizowane są wydarzenia przeznaczone dla mieszkańców jednej gminy. Dotyczy to zarówno wydarzeń na świeżym powietrzu jak i w pomieszczeniach, lecz nie dotyczy pogrzebów. (Nowy)

Miejsca pracy

  • Jeśli istnieje taka możliwość, zalecana jest praca zdalna.

Zasady dla całego kraju

Prywatne spotkania i wydarzenia

Większość prywatnych spotkań i wydarzeń powinna zostać przełożona lub odwołana. Jeśli spotkania mimo wszystko muszą się odbyć, obowiązują następujące zasady:

  • Maksymalnie dziesięć osób na prywatnych spotkaniach poza własnym domem, jak na przykład urodziny w wynajętym lokalu. Jeśli prywatne spotkanie odbywa się na zewnątrz, limit wynosi teraz 20 osób. (Nowy)
  • Maksymalnie dziesięć osób na halowych imprezach sportowych, wydarzeniach kulturalnych, seminariach, zgromadzeniach stowarzyszeń światopoglądowych, ceremoniach itd, natomiast jeśli cała publiczność siedzi na siedzeniach zamontowanych na stałe, limit ten wynosi 200 osób. W pogrzebach może brać udział do 50 osób, nawet jeżeli nie ma siedzeń zamontowanych na stałe.
  • Maksymalnie 200 osób na wydarzeniach odbywających się na świeżym powietrzu, natomiast jeśli cała publiczność siedzi na siedzeniach zamontowanych na stałe, limit wynosi 600 osób.
  • Dyrektoriat ds. Zdrowia będzie miał za zadanie ocenić, czy wymóg siedzeń zamontowanych na stałe dla 200 lub 600 uczestników wydarzeń powinien zostać zastąpiony innymi wymogami, na przykład wymogiem miejsc siedzących przydzielonych na stałe. (Nowy)

Życie społeczne i lokale gastronomiczne

Zakaz serwowania alkoholu w lokalach gastronomicznych zostaje przedłużony do odwołania. Kwestia ta zostanie poddana ponownej ocenie w przyszłym tygodniu, czyli w tygodniu nr 4.

Dawladdu waxa sii wadaysaa inta badan talaabooyinka ka hortagga faafitaanka ee adag si lo joojiyo mawjad faafitaan oo cusub, laakiin fududayn ayaa loo samaynayaa carruurta iyo dhallinyarada. Heerka talaabooyinka qaran ee iskuullada hoos baa loo dhigayaa oo huruud ayaa laga dhigayaa, isla markaana waxa meesha ka baxaya talooyinkii joojinta hawlaha isboortiga iyo wakhtiga firqaada ee carruurta iyo dhallinyarada. Taladii ku saabsanayd iska dhaafidda booqashooyinka guryaha lama sii wadayo, laakiin waxa wacan in dadku yareeyaan la jooga dadka kale.

– Inkastoo la moodo in talaabooyinku shaqeeyeen, oo tiradii faafitaanku hoos u dhacday, waxa weli shaki ka taaganyahay waxa iman kara. Waxannu aragnaa sida fayrustu ugu faafay waddamada innagu xeeran oo u sababtay cudur iyo dhimasho. Waxannu isku dayeynaa in arrintaasi ka dhicin Noorway. Taas darteed waxannu sii wadaynaa talaabooyin qaran oo adag iyo kantaroolada xuduudaha oo ak mid ah kuwa ugu adag Yurub, ayey sheegtay raysal-wasaare Erna Solberg.

Xaaladda faafitaanku weli ma saldhigan. Weli suurtagal uma noqon Machadka Caafimaadka Dadweynaha iyo Hay’adda Agaasinka Caafimaadka inay qiimeeyaan faa’idada ka dhalatay talaabooyinkii la hirgeliyey 4. janaayo. Si kastaba waxa dawladdu dooratay inay debcin ku samayso talaabooyinka qaran ee ugu adag, waayo waxa la arkay in kor u kacii faafitaanku istaagayo.

Waa la joojinayaa taladii ku saabsanayd in la iska dhaafo booqashooyinka guriga. Markaa waxa markale la ogolyahay in ugu badnaan 5 qof oo marti ah iman karto guriga, marka laga reebo dadka guriga ku nool, laakiin waxa wacan in dadku weli yareeyaan la jooga dadka kale.

Weli waxa wacan in dib loo dhigo ama la baajiyo inta badan isu-imaanshaha gaarka iyo qabanqaabooyinka kala duwan. Laakiin haddii laga maarmi waayo in isu-imaansho la sameeyo, waxa khuseeya xeerarkan: Isumaanshooyinka gaarka ah ee ka dhacaya meel aan guriga ahayn , tusaale ahaan xaflad dhalasho oo lagu qabanayo meel la kiraystay waxa la ogolyahay ugu badnaan 10 qof. Haddii isu-imaanshaha gaarka ah ka dhacayo meel dibedda ah, waxa la ogolyahay ugu badnaan 20 qof. Qabanqaabooyinka kale wax isbeddel ah ma lagu samayn xeerarka ku saabsan tirada dadka.

Heerka talaabooyinka qaran ee khuseeya dugsiyada dhexe iyo dugsiyada sare waxa lagu samaynayaa hoos u dhigis, oo heerka casaanka ayaa laga beddelayaa waxaana laga dhigayaa heerka huruuda. Degmooyinku waxay sii wadi karaan heerka cas inta laga baxayo usbuucan haddii ay u baahanyihiin wakhti ay ku diyaariyaan isbeddelka. Lakiin degmooyinka heerka faafitaanku ku badanyahay waxa u wacan inay ka fekeraan in dugsiyada dhexe iyo dugsiyada sare ku sii jiraan heerka cas, xataa xanaanooyinka carruurta iyo dugsiyada hoose.

Waxa meesha ka baxaysa taladii ku saabsanayd in la joojiyo tabobarka iyo hawlaha wakhtiga firaaqada ee heerka degmo ah. Carruurta iyo dhallinyarada ka yar 20 sanno jir waxay sidii caadiga ahayd uga qaybgeli karaan tabobarada iyo hawlaha wakhtiga firaaqada, kuwa gudaha iyo dibedada, waxaana laga dhaafi karaa kala fogaanshaha halka mitir ah. Taas darteed waa la samayn karaa hawlaha tabobarada ah ee uu gaarka ah naadiyada, kooxaha iyo ururada. Laakiin weli waa in dib loo dhigo ciyaaraha kooxaha iska soo horjeeda, koobabka iyo tartannada iwm, xataa kuwa carruurta iyo dhallinyaradu ka qaybgalayaan.

– Waxannu markasta sheegnay in aannu mudnaanta siin doono carruurta iyo dhallinyarada marka xaaladda faafitaanku saamaxayso. Taas darteed waxannu go’aaminay in heerka talaabooyinka qaran ee khuseeya dugsiyada dhexe iyo dugsiyada sare lagu samaynayaa hoos u dhigis, oo laga dhigo heerka huruuda, iyo in meesha laga saaro taladii ku saabsanayd in la joojiyo tabobarrada iyo hawlaha wakhtiga firaaqada carruurta iyo dhallinyarada ee heerka degmo ah.  Waanu ognahay in goobahaasi muhiim u yihiin iyaga. Waxa kale oo la ogolanaaya isku booqashada guryaha, laakiin waxa dadka laga codsanayaa inay yareeyaan dadka ay la kulmayaan, ayey sheegtay Solberg.

Farqi macno leh ayaa u dhexeeya sida faafitaanku u gaadhay deegaanada kala duwan ee waddanka. Waa muhiim in hay’adaha dawladeed oo degmooyinku ka fekeraan inay talaabooyin adag ku soo rogaan meelaha faafitaanku ku badanyahay.

– Haddii ay timaado mawjad faafitaan oo saddexaad waxa aad u adkaanaya in fuliyo talaalista dadweynaha. Shaqaale badan oo ka tirsan adeegyada caafimaadka iyo daryeelka ayaa hadda daalay maadaama ay muddoo dheer ku jireen culays shaqo oo aad u badan. Taas darteed waxa loo baahanyahay talaabooyin qaran oo laga hortago in mawjad faafitaan oo cusub cadaadis saarto hay’adaha adeegyada caafimaadka oo markaa adkaysto fulinta talaalista, ayuu dhahay Høie.

Waxa kale oo la sii wadayaa madnuucistii heerka qaran ahayd ee ku saabsanayd in aalkahool lagu iibin karin goobaha cabitaanka iyo cuntada, iyo qabanqaabooyinka.  Machadka Caafimaadka Dadweynuhu waxay soo jeediyeen in la tirtiro madnuucista, halka Hay’adda Agaasinka Caafimaadku aaminsantahay in cadaadiska faafitaanku weli yahay mid aan sawir buuxa laga haysan, waxaanay ku taliyeen in la sii wado.

– Dawladduu waxay la aragti tahay Hay’adda Agaasinka Caafimaadka waxaanay sii wadaysaa madnuucistii heerka qaran ahayd ee ku saabsanayd in aalkahool lagu iibin karin goobaha lagu cabo aalkahoolka. Qiimayn cusub ayaa arrintaas lagu samaynayaa usbuuca dambe. Waxannu ognahay in shaqaalaha goobaha cuntooyinka iyo cabitaannadu ku badanyihiin dadka laga helo fayrusta koroonada. Koox khabiiro ah oo Dhaanish ah ayaa xilli dhawaa soo bandhigay warbixin sheegaysa in baararku ka mid yihiin meelaha saamaynta ugu badan ku leh faafitaanka fayrusta, ayuu sheegay Høie.

Talaabooyinku waxay soconayaan ilaa iyo inta loo baahanyahay, laakiin dawladdu si socota ayey u qiimayn doontaa xaaladda. Madnuucista ku saabsan aalkahoolka qiimayn cusub ayaa lagu samaynayaa isla durba toddobaadka dambe.

Xanaanooyinka iyo iskuullada

  • Heerka talaabooyinka qaran ee khuseeya dugsiyada dhexe iyo dugsiyada sare waxa lagu samaynayaa hoos u dhigis, oo heerka casaanka ayaa laga beddelayaa waxaana laga dhigayaa heerka huruuda. Degmooyinku waxay sii wadi karaan heerka cas inta laga baxayo usbuucan haddii ay u baahanyihiin wakhti ay ku diyaariyaan isbeddelka. Lakiin degmooyinka heerka faafitaanku ku badanyahay waxa u wacan inay ka fekeraan in dugsiyada dhexe iyo dugsiyada sare ku sii jiraan heerka cas, xataa xanaanooyinka carruurta iyo dugsiyada hoose. (Waa mid cusub).

Soo jeedino ku socda waddanka oo dhan

Isla jooga dadka

  • Waxa wacan in dadkoo dhan yareeyaan la jooga dadka kale ilaa inta suurtagalka ah. Waxa lagu dhiirigelinayaa inay dadka kale kula kulmaan dibedda, iyo in martidoodu ka badan 5 qof. Haddii martidu ka wada timi hal guri, waa la kordhin karaa tirada, laakiin waa inay marnaba ka badan tiro keenaysa in la kala fogaan kari waayo. Carruurta xannaanooyinka iyo dugsiyada carruurta waxa soo booqan kara carruur ka tirsan kooxdooda joogtada ah. (Waa mid cusub).

Safarrada

  • Ha aadin safarrada gudahada iyo dibedda waddanka, haddii laga maarmi karo. Safarrada lagu tegayo goob waxbarasho waxa weli loo arkaa lagama maarmaan, balse safaradda lagu aadayo qabanqaabo waxa loo arkaa kuwo laga maarmi karo. Dadka lagama waaninayo joogitaanka guri-fasaxeed ku yaala Noorway oo ay la joogaan dadka guriga la degan, haddii lagu dhaqmayo talooyinka degmada ama qaranka iyo xeerarka markasta jira. (Waa mid cusub)

Waxbarashada sare

  • Waxa wacan in jaamacadaha iyo dugsiyada xirfadaha ay cashar-bixinta ka dhigaan dhijitaal marka ay suurtagal tahay. Waxa wacan in qabanqaabooyinka qorshaysan laga dhigo dhijitaal, waxaana wacan in la iska dhaafo cashar bixinta iyo kulannada isu keenaya dad badan. Ardayda joogta meel aan faafitaanku ku badnayn waxa wacan inay helaan cashar-bixin goobjoog ah ugu yaraan ah hal mar usbuucii, marka ay suurtagal tahay in ardayda loo qaybiyo kooxo yaryar isla markaana loo samayn karo qaab waafaqsan talaabooyinka ka hortagga faafitaanka. (Waa mid cusub)

Qabanqaabooyinka isboortiga, wakhtiga firaaqada, dhaqanka iyo diimaha

  • Carruurta iyo dhallinyarada ka yar 20 sanno jir waxay sidii caadiga ahayd uga qaybgeli karaan tabobarada iyo hawlaha wakhtiga firaaqada, kuwa gudaha iyo dibedada. Waxaana laga dhaafi karaa kala fogaanshaha halka mitir ah marka lagu qasabanyahay si loo samayn karo hawsha. Carruurta iyo dhallinyaradu waxay samayn karaan hawlaha tabobarada ah ee uu gaarka ah naadiyada, kooxaha iyo ururada, laakiin weli waa in dib loo dhigo ciyaaraha kooxaha iska soo horjeeda, koobabka iyo tartannada, xataa kuwa carruurta iyo dhallinyaradu ka qaybgalayaan. (Waa mid cusub)
  • Dadka waaweyn waxannu weli kula talinaynaa in aanay ka qaybgelin qabanqaabooyin ka dhacaya gudaha. Dadka waaweyn waxay jimicsi ama tabobar ku samayn karaan dibedda haddii ay kala fogaan karaan.
  • Ciyaaraha heerka sare ah waxa weli lagula talinayaa inay dhamaan ciyaaraha horyaallada dib u dhigaan labo toddobaad. Dalada Isboortiga ee Noorway ayaa laga codsanayaa inay arrintan la maamusho dalladaha gaarka ah. (Waa mid cusub)
  • Qabanqaabooyinka dhaqan sida riwaayadaha, bandhigyada iwm, iyo koorasyada/shirarka iyo qabanqaabooyinka diiniga ah, dib ha loo dhigo haddii ay isugu imanayaan dad ka socda degmooyin kala duwan. Dadweynaha waxa laga codsanayaa inay ixtiraamaan xadidnaanta qabanqaabiyuhu u sheego marka ay samaynayaan qabanqaabooyin loogu talogalay dadweyne degan hal degmo. Taladani waxay khuseysaa qabanqaabooyinka ka dhacaya gudaha iyo kuwa dibeddaba, laakiin ma khusayso aasaska. (Waa mid cusub)

Goobaha shaqada

  • Qof kasta oo awooda waxa lagula talinayaa inuu shaqada ku qabto xafiis-guriyeed.

Xeerar khuseeya waddanka oo dhan

isu-imaanshaha iyo qabanqaabooyinka gaarka ah

Waxa wacan in dib loo dhigo ama la baajiyo inta badan isu-imaanshaha iyo qabanqaabooyinka gaarka ah. Laakiin haddii laga maarmi waayo in la qabto, waxa khuseeya xeerarkan:

  • Isu-imaanshooyinka gaarka ah ee ka dhacaya meel aan guriga ahayn , tusaale ahaan xaflad dhalasho oo lagu qabanayo meel la kiraystay waxa la ogolyahay ugu badnaan 10 qof. Haddii isu-imaanshaha gaarka ah ka dhacayo meel dibedda ah, waxa la ogolyahay ugu badnaan 20 qof. (Waa mid cusub)
  • Ugu badan 10 qof ayaa joogi kara qabanqaabo ku saabsan ciyaaro, dhaqan, seminaaro, diin, xaflad iwm oo lagu qabanayo gudaha, laakiin waxa joogi kara 200 qof haddii qof kastaa ku fadhiyo kursi meel ku dhegan. Aasaska/duugitaanka qofka dhintay waxa joogi kara ugu badnaan 50 qof, inkastoo kuraasku meel ku dhegnayn.
  • Ugu badnaan 200 qof ayaa wada joogi kara qabanqaabo dibedda ka dhacaysa, laakiin waxa wada joogi kara 600 qof haddii qof kasta u fadhiyo kursi meel ku dhegan.
  • Hay’adda Agaasinka Caafimaadka waxa loo xilsaaray inay qiimayn ku samayso in shuruudka ku saabsan kuraasta meel ku dhegan si ka qaybgalayaasha qabanqaabooyinku u noqon karaan 200 ama 600, lagu beddeli karo shuruudo kale, tusaale ahaan shuruud ku saabsan in qof kasta la siiyo boos fadhi oo aan la bededeli karin. (Waa mid cusub)

Goobaha cawaysyada iyo cuntooyinka

Waa la sii wadayaa madnuucistii ku saabsanayd in aalkahool lagu iibin karin goobaha cabitaanka iyo cuntada. Qiimayn cusub ayaa lagu samaynayaa arrintan toddobaadka 4-aad, oo ah toddobaadka dambe.

بنیادی طور پر حکومت انفیکشن سے بچاؤ کے سخت اقدامات کو جاری رکھے ہوئے ہے تاکہ انفیکشن کی نئی لہر کو روکا جائے لیکن بچوں اور نوجوانوں کے لیے کچھ آسانیاں مہیا کی جا رہی ہیں۔ سکولوں کے لیے قومی اقدامات کی سطح کو اب کم کر کے پیلی سطح پر لایا جا رہا ہے اور بچوں اور نوجوانوں کے لیے کھیلوں اور فرصت کی مقامی سرگرمیوں سے اب منع نہیں کیا جا رہا۔ گھر میں ملاقاتوں سے گریز کی ہدایت اب نہیں کی جا رہی لیکن سب لوگوں کو سماجی واسطہ محدود رکھنا چاہیے۔   

-اگرچہ اقدامات مؤثر دکھائی دے رہے ہیں اور انفیکشنوں کی تعداد میں کچھ کمی ہوئی ہے، صورتحال اب بھی غیریقینی ہے۔ ہم دیکھ رہے ہیں کہ انفیکشن کس طرح ہمارے ارد گرد کے ممالک پر حملہ آور ہے اور بیماری اور اموات کا باعث بن رہا ہے۔ ناروے میں ہم اس صورتحال سے بچنے کی کوشش کریں گے۔ لہذا ہم ان سخت قومی اقدامات اور یورپ میں سخت ترین سرحدی پابندیوں کو آئندہ بھی جاری رکھیں گے، وزیر اعظم ارنا سولبرگ نے کہا۔

انفیکشن کی صورتحال اب بھی غیریقینی ہے۔ فی الحال نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف پبلک ہیلتھ اور ڈائریکٹوریٹ آف ہیلتھ کے لیے یہ جانچنا ممکن نہیں ہے کہ 4 جنوری سے متعارف کروائے جانے والے اقدامات کا کتنا اثر ہوا ہے۔ اسکے باوجود حکومت نے فیصلہ کیا ہے کہ سخت ترین قومی اقدامات میں بعض آسانیاں دی جائیں کیونکہ انفیکشن کی تعداد ایک سطح پر رک جانے کے آثار ہیں۔

گھروں میں ملاقاتوں سے گریز کی ہدایت اب نہیں کی جا رہی۔ اس کا مطلب ہے کہ ہم دوبارہ اپنے گھر میں 5 تک مہمانوں کو بلا سکتے ہیں جو ہمارے گھر میں رہنے والے لوگوں کے علاوہ ہوں لیکن سب لوگوں کو اب بھی سماجی واسطہ محدود رکھنا چاہیے۔

اکثر پرائیویٹ تقریبات اور مختلف پروگراموں کو اب بھی ملتوی یا منسوخ کرنا چاہیے۔ اگر پھر بھی تقریب رکھنا ضروری ہو تو مندرجہ ذیل اصول واجب ہیں: اپنے گھر سے باہر کسی مقام پر پرائیویٹ تقریبات جیسے کرایے پر لیے گئے ہال میں سالگرہ کے لیے 10 افراد کی حد مقرر ہے۔ اگر پرائیویٹ تقریب کھلی جگہ پر ہو تو یہ حد اب 20 افراد ہے۔ دوسرے پروگراموں کے لیے افراد کی تعداد کے اصولوں میں کوئی تبدیلی نہیں ہوئی۔

سیکنڈری اور اپر سیکنڈری سکولوں کے لیے قومی اقدامات کی سطح کو سرخ سے نیچے پیلی سطح پر لایا جا رہا ہے۔ اگر پیلی سطح پر آنے کے لیے تیاریوں کی ضرورت ہو تو بلدیات اس ہفتے سرخ سطح برقرار رکھ سکتی ہیں۔ انفیکشن کے زیادہ دباؤ سے دوچار بلدیات کو سیکنڈری اور اپر سیکنڈری سکولوں میں سرخ سطح برقرار رکھنے پر غور کرنا چاہیے، اور حسب ضرورت چھوٹے بچوں کے نگہداشتی مراکز اور پرائمری سکولوں میں بھی سرخ سطح پر غور کرنا چاہیے۔

اب بچوں اور نوجوانوں کے لیے کھیلوں اور فرصت کی مقامی سرگرمیوں سے منع نہیں کیا جا رہا۔ 20 سال سے کم عمر کے بچے اور نوجوان نارمل معمول کے مطابق، کھلی جگہوں پر بھی اور عمارتوں کے اندر بھی، ٹریننگ اور فرصت کی سرگرمیوں میں شریک ہو سکتے ہیں۔ انہیں 1 میٹر فاصلے کی ہدایت سے بھی چھوٹ مل سکتی ہے جب یہ سرگرمی کرنے کے لیے ضروری ہو۔ لہذا بچوں اور نوجوانوں کے لیے کلبوں، ٹیموں اور تنظیموں کے اندر عام ٹریننگ ہو سکتی ہے لیکن میچ، کپ، ٹؤرنامنٹ جیسے مواقع کو اب بھی ملتوی رکھنا ضروری ہے۔

-ہم نے ہمیشہ یہی کہا ہے کہ جب انفیکشن کی صورتحال کے لحاظ سے یہ ممکن ہوگا تو ہم بچوں اور نوجوانوں کو ترجیح دیں گے۔ اس لیے ہم نے فیصلہ کیا ہے کہ سیکنڈری اور اپر سیکنڈری سکولوں کے لیے قومی اقدامات کی سطح کو نیچے پیلی سطح پر لایا جائے اور اب بچوں اور نوجوانوں کی ٹریننگ اور فرصت کی مقامی سرگرمیوں سے منع نہیں کیا جاتا۔ ہم جانتے ہیں کہ یہ سرگرمیاں ان کے لیے کتنی اہم ہیں۔ ہم پھر سے گھر میں ملاقاتوں کی اجازت بھی دے رہے ہیں لیکن ہماری لوگوں سے درخواست ہے کہ وہ اپنے ملنے والوں کی تعداد محدود رکھیں، سولبرگ صاحبہ نے کہا۔

ملک بھر میں انفیکشن کی صورتحال میں بہت فرق ہے۔ یہ اہم ہے کہ مقامی حکام ان علاقوں میں زیادہ سخت اقدامات پر غور کریں جہاں انفیکشن زیادہ ہے۔

-انفیکشن کی تیسری لہر سے یہ نہایت مشکل ہو جائے گا کہ آبادی کو ویکسین لگائی جائے۔ صحت اور نگہداشت کے نظام کے عملے میں بہت سے لوگ اب لمبا عرصہ کام کے شدید دباؤ کی وجہ سے تھک چکے ہیں۔ لہذا نظام صحت کو انفیکشن کی نئی لہر کے دباؤ سے بچانے اور ویکسین لگانے کے عمل میں مشکلات سے بچنے کے لیے ہمیں قومی اقدامات کی ضرورت ہے، Høie نے کہا۔

باروں اور نائٹ کلبوں اور پروگراموں میں شراب پیش کرنے کی ممانعت ابھی کسی نئی اطلاع تک جاری رہے گی۔ نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف پبلک ہیلتھ نے ممانعت ختم کرنے کا مشورہ دیا تھا لیکن ڈائریکٹوریٹ آف ہیلتھ کی رائے میں انفیکشن کی صورتحال اب بھی غیر واضح ہے اور ڈائریکٹوریٹ نے اس پابندی کو برقرار رکھنے کا مشورہ دیا۔

- حکومت ڈائریکٹوریٹ آف ہیلتھ کے ساتھ متفق ہے اور مزید کسی اطلاع تک قومی سطح پر شراب پیش کرنے کی ممانعت جاری رکھے گی۔ اگلے ہفتے دوبارہ غور کیا جائے گا۔ ہم جانتے ہیں کہ ریستورانوں اور باروں میں کام کرنے والے اپنی تعداد کی نسبت کرونا وائرس کے انفیکشن سے متاثر ہونے والوں میں زیادہ ہیں۔ ڈنمارک میں ماہرین کے ایک گروپ نے حال ہی میں ایک نئی رپورٹ پیش کی ہے جس سے پتہ چلتا ہے کہ بار ان مقامات میں شامل ہیں جو انفیکشن کے پھیلاؤ پر سب سے زیادہ اثرانداز ہوئے ہیں، Høie نے کہا۔

یہ اقدامات اتنا عرصہ برقرار رہیں گے جتنا عرصہ ان کی ضرورت ہے لیکن حکومت مسلسل صورتحال پر غور کرتی رہے گی۔ شراب پیش کرنے کی ممانعت پر اگلے ہی ہفتے غور کیا جائے گا۔

چھوٹے بچوں کے نگہداشتی مراکز اور سکول

 

·         سیکنڈری اور اپر سیکنڈری سکولوں کے لیے قومی اقدامات کی سطح کو سرخ سے نیچے پیلی سطح پر لایا جا رہا ہے۔ اگر پیلی سطح پر آنے کے لیے تیاریوں کی ضرورت ہو تو بلدیات اس ہفتے سرخ سطح برقرار رکھ سکتی ہیں۔ انفیکشن کے زیادہ دباؤ سے دوچار بلدیات کو سیکنڈری اور اپر سیکنڈری سکولوں میں سرخ سطح برقرار رکھنے پر غور کرنا چاہیے، اور حسب ضرورت چھوٹے بچوں کے نگہداشتی مراکز اور پرائمری سکولوں میں بھی سرخ سطح پر غور کرنا چاہیے۔ (نئی اطلاع)۔

پورے ملک میں سب لوگوں کے لیے ہدایات

سماجی واسطہ

·         سب لوگوں کو جس حد تک ممکن ہو، سماجی واسطہ بالکل محدود کر دینا چاہیے۔ آپکی حوصلہ افزائی کی جاتی ہے کہ دوسرے لوگوں سے کھلی جگہوں پر ملیں، اپنے گھر میں رہنے والوں کے علاوہ 5 سے زیادہ مہمانوں کو گھر میں مدعو نہ کریں۔ اگر تمام مہمان ایک ہی گھر سے آ رہے ہوں تو وہ 5 سے زیادہ ہو سکتے ہیں لیکن پھر بھی لوگوں کی تعداد اتنی زیادہ نہیں ہونی چاہیے کہ آپس میں فاصلہ نہ رکھا جا سکے۔ چھوٹے بچوں کے نگہداشتی مراکز اور پرائمری سکولوں کے بچے اپنے درجے/کلاس کے بچوں سے مل سکتے ہیں۔ (نئی اطلاع)۔ 

سفر

·         اندرون ملک اور بیرون ملک سفر نہ کریں، سوائے اسکے کہ سفر ضروری ہو۔ درسگاہ تک کے سفر کو اب بھی ضروری سفر سمجھا جا سکتا ہے لیکن پروگراموں میں شرکت کے لیے سفر کو عام طور پر ضروری سفر تصوّر نہیں کیا جاتا۔ ناروے میں ان لوگوں کے ساتھ تفریحی کاٹیج میں قیام سے اب بھی منع نہیں کیا جا رہا جن کے ساتھ آپ ایک ہی گھر میں رہتے ہیں، جب یہ قیام واجب مقامی اور قومی مشوروں اور اصولوں کے اندر رہتے ہوئے کیا جائے۔ (نئی اطلاع)۔

اعلی تعلیم

  • جہاں ممکن ہو، تمام یونیورسٹیوں، یونیورسٹی کالجوں اور پیشہ ورانہ تعلیم کے اداروں کو ڈیجیٹل طریقۂ تعلیم استعمال کرنا چاہیے۔ ترتیب دیے جانے والے تمام پروگراموں کو ڈیجیٹل ہونا چاہیے اور بڑے لیکچروں اور میل جول سے گریز کرنا چاہیے۔ جن علاقوں میں انفیکشن زیادہ نہیں، وہاں کے طالبعلموں کو ہفتے میں کم از کم ایک بار ذاتی حاضری کی صورت میں تعلیم کا موقع ملنا چاہیے جب چھوٹے گروپوں میں اور انفیکشن سے بچاؤ کی ہدایات کے مطابق انجام دینا ممکن ہو۔ (نئی اطلاع)۔

کھیل، مشاغل فرصت، کلچرل اور نظریات حیات کے پروگرام

·         20 سال سے کم عمر کے بچے اور نوجوان نارمل معمول کے مطابق، کھلی جگہوں پر بھی اور عمارتوں کے اندر بھی، فرصت کی سرگرمیوں میں شریک ہو سکتے ہیں۔ انہیں 1 میٹر فاصلے کی ہدایت سے بھی چھوٹ مل سکتی ہے جب یہ سرگرمی کرنے کے لیے ضروری ہو۔ بچوں اور نوجوانوں کے لیے کلبوں، ٹیموں اور تنظیموں کے اندر عام ٹریننگ ہو سکتی ہے لیکن میچ، کپ، ٹؤرنامنٹ جیسے مواقع کو اب بھی ملتوی رکھنا ضروری ہے۔ (نئی اطلاع)۔

·         بالغ افراد کے لیے آئندہ بھی یہی ہدایت ہے کہ وہ عمارتوں کے اندر منظّم سرگرمیاں نہ کریں۔ بالغ افراد کھلی جگہوں پر ٹریننگ کر سکتے ہیں بشرطیکہ خوب فاصلہ رکھنا ممکن ہو۔

·         ہائی پرفارمنس سپورٹس (باقاعدہ مقابلہ جات والے کھیل) کے لیے ہدایت یہ ہے کہ تمام سیریز کھیلوں کو دو ہفتوں کے لیے ملتوی کر دیں۔ نارویجن سپورٹس کنفیڈریشن سے درخواست ہے کہ اس سلسلے میں مخصوص کھیلوں کی تنظیموں کے ساتھ مل کر کام کریں۔ (نئی اطلاع)۔

·         شوز، نمائشوں جیسے کلچرل پروگراموں، کورسوں/کانفرنسوں اور مذہب اور نظریۂ حیات سے تعلق رکھنے والی رسوم و تقریبات کو اس صورت میں ملتوی کر دینا چاہیے جب ان میں کئی بلدیات کے لوگ اکٹھے ہونے والے ہوں۔ لوگوں سے درخواست ہے کہ کسی ایک بلدیہ کے رہائشیوں کے لیے مخصوص پروگراموں کی انجام دہی کے سلسلے میں منتظمین جن پابندیوں سے آگاہ کریں، ان کا احترام کیا جائے۔ اس میں کھلی جگہوں اور عمارتوں کے اندر ہونے والے، دونوں طرح کے پروگرام شامل ہیں، سوائے جنازہ و تدفین کے۔ (نئی اطلاع)۔

کام کے مقامات

·         ان سب لوگوں کو گھر سے کام کرنے کی ہدایت کی جاتی ہے جن کے لیے یہ ممکن ہے۔

پورے ملک کے لیے اصول

پرائیویٹ تقریبات اور پروگرام

اکثر پرائیویٹ تقریبات اور پروگراموں کو ملتوی یا منسوخ کر دینا چاہیے۔ اگر پھر بھی تقریب رکھنا ضروری ہو تو مندرجہ ذیل اصول واجب ہیں:

·         اپنے گھر سے باہر کسی مقام پر پرائیویٹ تقریبات جیسے کرایے پر لیے گئے ہال میں سالگرہ کے لیے 10 افراد کی حد مقرر ہے۔ اگر پرائیویٹ تقریب کھلی جگہ پر ہو تو 20 افراد کی حد مقرر ہے۔ (نئی اطلاع)۔

·         عمارتوں کے اندر کھیلوں کے پروگراموں، کلچرل پروگراموں، سیمیناروں، نظریات حیات کے اجتماعوں، رسوم و تقریبات وغیرہ کے لیے زیادہ سے زیادہ 10 افراد کی حد ہے تاہم ان جگہوں پر 200 افراد ہو سکتے ہیں جہاں سب حاضرین فرش میں نصب سیٹوں پر بیٹھے ہوں۔ جنازہ و تدفین میں 50 تک افراد شریک ہو سکتے ہیں چاہے انکی سیٹیں فرش میں نصب نہ ہوں۔

·         کھلی جگہوں پر پروگراموں میں زیادہ سے زیادہ 200 افراد، تاہم ان جگہوں پر 600 افراد کی اجازت ہے جہاں سب حاضرین فرش میں نصب سیٹوں پر بیٹھے ہوں۔

·         ڈائریکٹوریٹ آف ہیلتھ کو یہ غور کرنے کی ذمہ داری سونپی جائے گی کہ آیا پروگرام میں فرش میں نصب سیٹوں پر 200 یا 600 شرکاء کے حکم کی جگہ دوسرے احکام ہونے چاہیئں مثال کے طور پر مقررّہ نشستوں کا حکم۔ (نئی اطلاع)۔

 

نائٹ کلب ، ریستوران اور بار وغیرہ

·         شراب پیش کرنے کی ممانعت ابھی کسی نئی اطلاع تک جاری رہے گی۔ ہفتہ 4 میں یعنی اگلے ہفتے دوبارہ غور کیا جائے گا۔